Pages

Wednesday, 2 November 2011

تعلیم ایک زہر

اُردو میں بلاگ لکھنے کا مجھے تجربہ نہیں ہےلیکن محسوس ہوتا ہے کہ بعض باتیں
 اُردو میں زیادہ دلچسپ معلوم ہوں گی۔ اس لیے "تاحکمِ ثانی" اس بلاگ کو اُردو کے لیے مختص کیا جاتا ہے۔ 

ایک وجہ یہ بھی ہے کہ پرائیویٹ چینلوں کی وجہ سے نئی نسل اُس اُردو سے بالکل دُور ہو رہی ہے جو ہماری نسل کو سرکاری ٹی وی اور ریڈیو وغیرہ کی بدولت مفت میسر تھی۔ یہ الفاظ "تاحکم ثانی" اور "٘مختص" اسی ورثے کا حصہ ہیں جو بچپن میں پی ٹی وی کے خبرنامے میں اتنی دفعہ سنے کہ یہ پوسٹ لکھتے ہوئے بلاوجہ استعمال کرنے کو دل چاہا۔ چنانچہ ایک خیال یہ بھی ہے کہ شاید اُردو میں بلاگ لکھ کر نوجوان پڑھنے والوں کو اُردو سے قریب لانے کی اُس کوشش میں حصہ لے سکوں جو بہت سے دل جلے اور دردمند آج کل کر رہے ہیں  [ان میں سے 
بعض اگر کرنا چھوڑ دیں تو اُردو دوبارہ مقبول ہو جائے گی]۔

بات کُھل گئی ہے تو کیوں نہ کُھل کر کی جائے۔ وہ تمام لوگ جو یہ بلاگ پڑھ رہے ہیں اُن میں سے جن کی عمر تیس برس سے کم ہے میں اُن سب سے یہ کہہنا چاہتا ہوں کہ آپ کو کالجوں اور یونیورسٹیوں میں جو کچھ بھی پڑھایا جاتا ہے اور پڑھایا گیا ہے وہ آپ کو ملک اور قوم کے کسی کام آنے میں مدد نہیں دے سکتا۔ خواہ آپ کا مضمون کوئی بھی رہا ہو، اساتذہ کوئی بھی رہے ہوں اور خواہ آپ نے کہیں سے بھی پڑھا ہو۔

مجھے اس بات میں شبہ نہیں کہ خدا کی مہربانی سے پاکستان میں ابھی ایسے بہت سے اساتذہ ہر سطح پر موجود ہیں جو صحیح رہنمائی کر سکتے ہیں۔ آپ کو بھی میسر آئے ہوں گے۔ لیکن اُن کی وہی باتیں آپ کے کسی کام آ سکی ہیں جن کا تعلق نصاب سے نہیں تھا۔

گزشتہ پچیس برسوں سے جو نصاب ہمارے تعلیمی اداروں میں رائج ہیں وہ نصاب نہیں، زہر ہیں۔ اگر آپ نے کسی اعلیٰ ادارے میں تعلیم حاصل کی تو اعلیٰ درجے کا زہر پیا ہے۔ ادنیٰ ادارے میں تعلیم پائی تو ادنیٰ زہر پیا ہے۔ اگر ملک سے باہر کے کسی ادارے سے ڈگری پانے کی توفیق ملی تو سمجھیے کہ درآمدشدہ زہر پیا۔ لیکن اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ تعلیم ایک زہر نہیں ہے تو سب سے پہلے یہی غلط فہمی اپنے ذہن سے نکال دیجیے تاکہ آپ دوبارہ زندہ ہو جائیں۔

ممکن ہے آپ کو یہ بات کچھ عجیب لگے۔ بالخصوص جو لوگ میرے انگریزی بلاگ پڑھنے کے عادی ہیں انہیں شاید کافی فرق محسوس ہو۔ مجبوری ہے۔ زبان کے ساتھ لہجہ بھی بدل جاتا ہے۔

 بہرحال آج مجھے اسی بات سے آغاز کرنا ہے کہ تعلیم ایک زہر ہے۔ اس کا یہ مطلب نہیں کہ آپ تعلیم حاصل نہ کریں۔ آخر سگریٹ بھی زہر ہے مگر لوگ پیتے ہیں۔ کچھ عرصہ پہلے ایک شخص سے ملاقات ہوئی تھی۔ اُس کی ملازمت یہی تھی کہ اونچی اونچی محفلوں میں جا کر لوگوں کو ایک مخصوص برانڈ کے سگریٹ پینے کی ترغیب دے۔ اُس برانڈ والے اُسے بڑی معقول رقم دیتے تھے۔ چنانچہ اُس شخص کے لیے تو سگریٹ کا زہر پینا اپنے پیشے کے لحاظ سے ایک مجبوری تھی جس کی بدولت اُسے کلفٹن میں گھر اور نئی گاڑی ملی ہوئی تھی۔ اسی طرح تعلیم بھی ضرور حاصل کرنی چاہیے جس طرح اُس شخص کو سگریٹ ضرور پینی چاہیے جس کی آمدنی کا انحصار ہی سگریٹ پینے اور پلانے پر ہے۔

لیکن وہ شخص بڑی غلطی کرے گا اگر سمجھنے لگے کہ سگریٹ پینے سے پھیپھڑے مضبوط ہوتے ہیں، دل کی بیماریاں دُور ہوتی ہیں اور کینسر کا علاج ہو جاتا ہے۔ بالکل ایسی ہی غلطی اُس بیچارے کی ہو گی جو سمجھے کہ تعلیم حاصل کرنے کی وجہ سے اُس کے علم میں اضافہ ہوا ہے یا سمجھ بڑھ گئی ہے۔

 کل پرسوں مزید فرصت ملتے ہی اگلی قسط پیش کروں گا تاکہ بات واضح ہو جائے۔  فی الحال آپ ڈنٹونک کا اشتہار دیکھیے۔ کسی نے اپنے دل کی "ایک" مراد پوری  کرنے کے لیے یُوٹیوب پر چڑھایا ہے۔ آمین۔ 

5 comments:

rIZ said...

hahaha :D

Loved itttttttttt!!!!

Yahi "lehja" rakhye ga please :p

Urdu main jo maza aur lazzat hai wo kahin aur nahin mil sakti.

Waiting for more...

p.s. thanks for starting in Urdu

Thinking said...

hmmm....bilkul...Urdu zabaan key kia baat hay....

And you are so right about studies in school and colleges..I wish everyone thinks of these institute the way to tell us....so that the coming one can be saved...

hmmm....looking forward for more...

Ahmad Safi said...

بہت خوب خرم بھائی۔۔۔
انوکھا عنوان اور انوکھی باتیں۔۔۔ آپ نے اپنی روایت برقرار رکھی۔ آپ کے ہمارے پیر اس وقت کہہ گئے تھے :
گلا تو گھونٹ دیا اہل ِ مدرسہ نے ترا
کہاں سے آئے صدا لا الٰہ الا اللہ

یا

شکایت ہے مجھے یا رب خُداوندانِ مکتب سے
سبق شاہین بچوں کو دے رہے ہیں خاکبازی کا

آج بھی یہی صورتحال ہے اور دلاور فگار صاحب کی طرح یہی کہنا پڑتا ہے ع
حالات ِ حاضرہ کو کئی سال ہو گئے

احقر
احمد صفی

Akhtar Wasim Dar said...

دلکش اور دلنشین شگفتہ انداز میں ایک تیکھی اور سلگتی تحریر

ReeBz said...

Thats amazing interesting and very very true! I must say i agree with your every word Sir!
I studied in KU but after entering in professional field I relaised that whatever i have learned in KU was nothing but a wastage of 2 years! By the kindness of Allah i got an amazing teacher who was the head of FM 106.2 that time and now he is the networking head of hm 107. Since he was not a teacher by profession he introduced us to the real field work and its requirements. He made his own course outline for us. All this he had been doing without the will of our chairperson. As a result, his contract were cancelled, but it was only him whose course is helping us in our jobs and field work!